اردوئے معلیٰ

میں لوٹا تو مرے آگے وہی منظر پرانا تھا

میں لوٹا تو مرے آگے وہی منظر پرانا تھا

کئی لوگوں سے ملنا تھا کئی قبروں پہ جانا تھا

وہی مایوسیاں بستی میں اب تک راج کرتی تھیں

انہیں سانپوں کا ہر چوپال پر حجرہ ٹھکانا تھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ