اردوئے معلیٰ

Search

میں منوّر ہوا کہہ کے صَلِّ علیٰ قلب سے روح تک

نام لے کر نبی کا مہکتا رہا قلب سے روح تک

 

اِک درودوں کی تسبیح میں نے پڑھی اُس کی تاثیر سے

ایک محفل سجی اِک چراغاں ہوا قلب سے روح تک

 

ہر گھڑی لب پہ ہے ذکرِ خیرالورا مرحبا مرحبا

ان کی یادوں کا ہے اک حسیں سلسلہ قلب سے روح تک

 

جب مدینے میں پہلے پہل مَیں گیا، جگمگا سا گیا

نور و نکہت کا اِک سلسلہ مل گیا قلب سے روح تک

 

جس گھڑی مجھ کو پروانہ حج کا ملا وہ سماں خوب تھا

خوشبوؤں سے بھرا جشن سا تھا بپا قلب سے روح تک

 

اُن کے دربار میں اِک عجب روشنی سی مرے ساتھ تھی

اور اُسی روشنی میں نہاتا گیا قلب سے روح تک

 

ماہِ میلاد ، دُنیا میں آنے کو ہے جگمگانے کو ہے

مرحبا مرحبا کی ہے نوری صدا قلب سے روح تک

 

نعت کہنے کو جب بھی اُٹھایا قلم کیف سا چھا گیا

گونجتی ہی رہی اِک نرالی صدا قلب سے روح تک

 

نعت گوئی کا اعزاز جب سے ملا خاکیٔؔ بے نوا

اپنی ہستی کو میں نے بھی مہکا دیا قلب سے روح تک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ