اردوئے معلیٰ

میں پہلے آبِ زم زم سے قلم تطہیر کرتا ہوں​

 

میں پہلے آبِ زم زم سے قلم تطہیر کرتا ہوں​

پھر اُس کے بعد کاغذ پر نبی تحریر کرتا ہوں​

 

میں دھو لیتا ہوں جب قرطاس سارا آبِ گریہ سے​

تب اُس پر گنبدِ خضرا کو میں تصویر کرتا ہوں​

 

مرے آنسو مری فکر ِ سُخن کو غسل دیتے ہیں​

تو پھر میں نعت کہنے کی کوئی تدبیر کرتا ہوں​

 

تمام آدابِ فن جس دم ادب آموز ہو جائیں​

میں اُن کی مدح میں الفاظ تب زنجیر کرتا ہوں​

 

میں دوڑاتا ہوں اسپِ فکر ساتوں آسمانوں پر​

مقام مصطفی پہ پھر میں کچھ تقریر کرتا ہوں​

 

سکُوتِ نیم شب میں نعت جب مجھ پہ اُترتی ہے​

ہزاروں کہکشاؤں کو میں تب تسخیر کرتا ہوں​

 

ڈبوتا ہوں میں مستی کے سفینے ” ھُو ” کے قلزم میں​

پھر ہر اِک موج ِ قلزم آپ کی جاگیر کرتا ہوں​

 

خرد کی آگ میں شب بھر پکا کر عشق کی اینٹیں​

نئے مسکن جنوں کے میں کئی تعمیر کرتا ہوں​

 

مرے ادراک کے قلبِ حزیں سے خوں نکلتا ہے​

شروع میں جب بھی ذکرِ زینب ِ دلگیر کرتا ہوں​

 

نبی کی آل کا دشمن مسلماں ہو نہیں سکتا​

کوئی گر ہے تو میں اُس کی کھلی تکفیر کرتا ہوں​

 

مری گر کوئی عزت ہے تو اُس کا بس سبب یہ ہے​

میں اہل ِ بیت کی واصف بہت توقیر کرتا ہوں​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ