میں کہتا ہوں اُسے مت دیکھو لیکن

میں کہتا ہوں اُسے مت دیکھو لیکن

مری آنکھیں مری سُنتی کہاں ہیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میرے حِصّے میں نہ آئے ھُوئے پانی ! تری خیر
نیا کرایے دار یہ سُن کر کانپ رہا ہے
تیرے دکھ درد بھلانے کو محبت کر لی
کی ریا سے نہ شیخ نے توبہ
نفرتوں کا عکس بھی پڑنے نہ دینا ذہن پر
جو مے نوشی کی قسمیں فرقت ساقی نہ کھلواتی
اس زندگی میں اتنی فراغت کسے نصیب
میرے ہاتھ میں کوڑا ہے میں کھال ادھیڑ بھی سکتی ہوں
میں جس ارادے سے جارہی ہوں اسی ارادے سے لڑ پڑوں گی
گرد شہرت کو بھی دامن سے لپٹنے نہ دیا

اشتہارات