اردوئے معلیٰ

نئی منزلوں کا پیامبر ، ترے راستوں پہ سفر مرا

تری آرزو مری زندگی ، تری جستجو ہے ہُنر مرا

 

مری خواہشوں کے جہان میں کئی واہمے تھے کبھی ، مگر

جو ہر اک گمان کو رَد کرے ، وہ یقین ہے گُلِ تر مرا

 

دلِ نور دیدۂ آشنا ، مہ و مہر ہیں ترا نقشِ پا

ترے عشق میں ہے غزل سرا ، یہ نظامِ شام و سحر مرا

 

شب و روز کی تگ و تاز نے کئی حوصلوں کو گرا دیا

یہ تری ثنا کا ہے معجزہ جو کبھی جُھکا نہیں سر مرا

 

مری ہر خطا پہ ترا کرم ، تری اک نظر ہے مرا بھرم

نہیں اب مجھے غمِ بیش و کم کہ ہے شہرِ نعت میں گھر مرا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات