نئی نعت لکھوں نیا سال ہے​

نئی نعت لکھوں نیا سال ہے​

کہ نوروز سے جی بھی خوشحال ہے​​

 

خدا ہے محمد ہے اور آل ہے​

سوا اِن کے جو کچھ ہے جنجال ہے​​

 

سمندِ قلم کی دمِ وصفِ شاہ​

نئی ہے روش اور نئی چال ہے​​

 

ہے نعتِ نبی ذکرِ پروردگار​

کہ یہ تو عمل حُسنِ اعمال ہے​​

 

نمازوں میں شہ کا تصور رہے

کہ یہ حال ہے اور وہ قال ہے​​

 

رسائی ہے جس کی درِ شاہ پر​

وہی صاحبِ جاہ و اقبال ہے​​

 

پیمبر کی انگلی کا ہے وہ نشاں​

رُخِ مہ پہ سمجھا جسے خال ہے​​

 

ڈروں تیغِ آفت کے کیوں وار سے​

کہ نامِ محمد مری ڈھال ہے​​

 

غمِ دین و دنیا مجھے کچھ نہیں​

ثنا خوانِ شہ فارغ البال ہے​​

 

نہیں کچھ مرے دل میں جز شوقِ نعت​

کہ ہر حسرت و حرص پامال ہے​​

 

میں عسرت میں لکھتا ہوں نعتِ نبی​

خدائے جہاں کا یہ افضال ہے​​

 

ورق چند ہیں نعت کے میرے پاس​

یہی اپنی پونجی یہی مال ہے​​

 

ہے پائے محمد سرِ دِلّو رام​

یہ نسبت مرے اوج پر دال ہے​

 

مدینے کے آنے لگے خواب روز​

میاں کوثری نیک یہ فال ہے​​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ