اردوئے معلیٰ

Search

ناداروں کو علم کے موتی آقا نے انمول دیے

بابِ جہالت بند کیا اور ذہنوں‌کے در کھول دیے

 

انگاروں کو پھول بنایا ذرّوں کو خورشید کیا

جن ہونٹوں میں زہر بھرا تھا ان کو میٹھے بول دیے

 

میرے آقا آپ نے ان کو درس دیا ہے محنت کا

دنیا کے لوگوں نے جن کے ہاتھوں میں کشکول دیے

 

آپ سے بڑھ کر انسانوں کا اور کوئی ہمدرد نہیں

سنگ زنوں کو سنگ کے بدلے پیار کے موتی تول دیے

 

مدحت کا ٹوٹا نہ تسلسل گنبد سبز کے سائے میں

ساتھ زباں نے چھوڑ دیا تو آنکھ نے موتی رول دیے

 

یاد مدینہ جب بھی آئی ہم جیسے مجبوروں کو

طائر جسم و جاں نے ہمارے اُڑنے کو پر تول دیے

 

بے كيفى كے موسم ميں اك كيف سِوا اعجاز ملا

نغمہءِ نعتِ سرورِ ديں نے رنگ فضا ميں گھول دیے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ