اردوئے معلیٰ

Search

نازاں رہے کہ رقص میں ہے باد گردِ دل

جب رقص تھم چکا تو اُڑی خوب گردِ دل

 

اک عمر ریگ زارِ محبت کو سونپ دی

اک عرصہِ حیات کیا رہنِ دردِ دل

 

ہم نے رفو کیا ہے بدن تیرے تیر سے

رنگین کی ہے خون کی چھینٹوں سے فردِ دل

 

وہ خوف جا گزین ہوا بزمِ عشق میں

دھڑکن کو کھا گئی ہے کوئی آہِ سردِ دل

 

تم کو خبر کہاں تھی منازل کی رونقو

رستوں میں کھو گیا کوئی صحرا نوردِ دل

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ