اردوئے معلیٰ

Search

نازِ کبریا ہے تو فخر انبیاء ہے تو

وجہِ دونوں عالم کی میرے مصطفےٰ ہے تو

 

بے وفا زمانے کو تو نے الفتیں بانٹیں

کوئی بھی نہ تھا جس کا اس کا آسرا ہے تو

 

روشنی ترا پرتو چاندنی ترا دہوون

کیا مثال دوں تیری کیا نہیں ہے کیا ہے تو

 

قدر والی شب میں جو میں نے رب سے مانگی تھی

کپکپاتے ہونٹوں سے وہ مری دعا ہے تو

 

زندگی تری باندی وقت ہے ترا خادم

جو بھی ہے زمانے میں اس کا مدعا ہے تو

 

تذکرے ترے سن کر ان کے کھل اٹھیں چہرے

جن کی لو لگی تجھ سے جن کا دل ربا ہے تو

 

چاندنی ، شفق ، شبنم ، کہکشاں ، صبا ، خوشبو

آسؔ کیا لکھے تجھ کو سب سے ماورا ہے تو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ