اردوئے معلیٰ

نبی کا آستاں پیشِ نظر ہے

محبت کا جہاں، پیشِ نظر ہے

 

درِ اقدس پنہ گاہِ غریباں

درِ دارالاماں پیشِ نظر ہے

 

حبیبِ کبریا، محبوبِ یزداں

خُدا کا ترجماں، پیشِ نظر ہے

 

میں زندہ ہوں بفیضانِ محمد

مسیحائے زماں، پیشِ نظر ہے

 

کیے جاتا ہوں میں سجدوں پہ سجدے

کفِ پا کا نشاں، پیشِ نظر ہے

 

میں گریاں ہوں، کہ دشتِ کربلا کی

فضائے خونچکاں، پیشِ نظر ہے

 

مرے آقا ظفرؔ پر مہرباں ہیں

حضوری کا سماں، پیشِ نظر ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات