اردوئے معلیٰ

Search

نبی کی یاد میں خود کو بُھلائے بیٹھے ہیں

اِنہی کی ذات سے بس لَو لگائے بیٹھے ہیں

 

تصورات میں ہر دم انہی کے ہیں جلوے

انہی کے ذکر کی محفل سجائے بیٹھے ہیں

 

کبھی تو وصل کی شب ہوگی آپ کی آمد

اسی اُمید پہ خود کو جگائے بیٹھے ہیں

 

گزر تو ہو گا کسی رہ گزر سے آقا کا

ہر ایک راہ میں پلکیں بچھائے بیٹھے ہیں

 

جمالِ چہرۂ انور جو خواب میں دیکھا

وہی نظارہ نظر میں بسائے بیٹھے ہیں

 

اے ناز ہو گی مدینے میں حاضری اپنی

دیے اُمید کے ہم تو جلائے بیٹھے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ