اردوئے معلیٰ

Search

نبی کے ذکر کی محفل سجائے بیٹھے ہیں

دروُد پاک کی شمعیں جلائے بیٹھے ہیں

 

تمام عُمر کا حاصل ہیں یہ حسیں گھڑیاں

درِ حضوُر پہ ڈیرہ جمائے بیٹھے ہیں

 

خوشا کہ گنبدِ خضرا نظر کے سامنے ہے

اسی کے نقش کو دل میں بسائے بیٹھے ہیں

 

کبھی تو لائیں گے تشریف سیدِ عالم

ہم اُن کی راہ میں پلکیں بچھائے بیٹھے ہیں

 

بسی ہے نامِ محمد کی مہک سانسوں میں

انہی کی یاد کو دل سے لگائے بیٹھے ہیں

 

حروف نعت، تخیل کا اب طواف کریں

’’سو اپنے قلب کو کعبہ بنائے بیٹھے ہیں‘‘

 

اے ناز اُن کی شفاعت کریں گے شاہِ اُمم

جو بوجھ عصیاں کا بھاری اُٹھائے بیٹھے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ