اردوئے معلیٰ

نت نئے رنگ بدلتا ہے کسک مانگتا ہے

نت نئے رنگ بدلتا ہے کسک مانگتا ہے

زخم سچا ہو تو ہر وقت نمک مانگتا ہے

 

میں نے جس شخص کو صحرائی سمجھ رکھا تھا

اس کے چہرے سے ہر اک پھول مہک مانگتا ہے

 

ڈھونڈتا پھرتا ہوں ہر دہکے بدن میں تاحال

ایسا شعلہ جو لپک دے کے لپک مانگتا ہے

 

میرے دشمن مرا ادنیٰ سا تعارف یہ ہے

میں وہ سالار نہیں ہوں جو کمک مانگتا ہے

 

اے طلسماتی خدو حال کے مالک تجھ سے

آخری بار کوئی پہلی جھلک مانگتا ہے

 

اُس بدن کی یہ فضیلیت ہے کہ چھونے سے قبل

جست سا ہاتھ بھی سونے سی چمک مانگتا ہے

 

وہ چٹانی لب و لہجہ نہیں پگھلا ورنہ

میرے اشکوں سے تو سورج بھی تپک مانگتا ہے

 

میں تجھے اس لیے چھونے سے بھی کتراتا ہوں

مجھ سے ہر بار ترا جسم دھنک مانگتا ہے

 

شاعری سہل نہیں تازہ زمانوں میں فقیہہ

شعر سادہ بھی لکھوں لہجہ کڑک مانگتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ