اردوئے معلیٰ

نشانِ منزلِ من مجھ میں جلوہ گر ہے تو

نشانِ منزلِ من مجھ میں جلوہ گر ہے تو

مجھے خبر ہی نہیں تھی کہ ہمسفر ہے تو

 

سفالِ کوزۂ جاں! دستِ مہر و الفت پر

تجھے گدائی میں رکھوں تو معتبر ہے تو

 

علاجِ زخمِ تمنا نے مجھ کو مار دیا

کسی کو کیسے بتاؤں کہ چارہ گر ہے تو

 

چراغِ بامِ تماشہ کو بس بجھا دے اب

میں جس مقام پہ بیٹھا ہوں باخبر ہے تو

 

یہ کس گمان میں لڑتا ہے تو حقیقت سے

یہ کس خیال کے عالم میں گم نظر ہے تو

 

ترے قدم سے بندھے ہیں ترے زمان و مکاں

تجھے مقیم سمجھتا تھا در بدر ہے تو

 

ابھی تو قضیۂ نان و نمک نہیں نبٹا

ابھی سے پائے تمنا کدھر کدھر ہے تو

 

تری جڑیں کسی مٹی کو ڈھونڈتی ہیں ظہیرؔ

زمینِ زر میں ابھی تک جو بے ثمر ہے تو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ