نظر نیچی، خمیدہ سر، جبیں کو اپنی خم رکھنا

 

نظر نیچی، خمیدہ سر، جبیں کو اپنی خم رکھنا

مدینہ جانے والو جب وہاں پہلا قدم رکھنا

 

یہاں کی حاضری ایقانِ بخشش کو بڑھاتی ہے

لبوں پر التجائے مغفرت آنکھوں کو نم رکھنا

 

انہی کے دم قدم سے بزمِ ہستی میں بہاریں ہیں

حضورِ حق دعاؤں کو وسیلے میں ہی ضم رکھنا

 

یہ شہرِ شاہِ خوباں ہے یہاں رحمت برستی ہے

جبینِ شوق کے سجدے سرِ باغِ ارم رکھنا

 

یہ در اللہ کے محبوب کا ہے اے دلِ ناداں

ادب کے ساتھ رودادِ الم، دیوانِ غم رکھنا

 

بنے روزِ جزا موجب رہائی کا تری منظرؔ

ترا ہجر مدینہ کا مسلسل دل میں غم رکھنا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ