اردوئے معلیٰ

نظر ڈھونڈتی ہے دیار مدینہ​

ہیں دل اور جاں بے قرار مدینہ​

 

وہ دیکھو احد پر شجاعت کا منظر​

شہیدوں کے خون شہادت کا منظر​

 

وہ ہے سامنے سبز گنبد کا منظر​

اسی میں تو آرام فرما ہیں سرور​

 

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر​

یہیں تھے یہ پروانہ شمع انور​

 

یہیں سے تو اسلام پھیلا جہاں میں​

مدینہ کا شہرہ ہے ہفت آسماں میں​

 

نشان نبی ہے یہ مسجد قبا کی​

ہے قندیل طیبہ نبی کی ضیاء کی​

 

مدینہ کے دیوار و در دیکھتے ہیں​

عجب حال قلب و جگر دیکھتے ہیں​

 

یہ مسکن ہے شاہ مدینہ کا اختر​

فلک بوسہ زن ہے یہاں کی زمیں پر​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات