اردوئے معلیٰ

Search

نعتِ سرکار میں سُناتا ہُوں

اپنی تقدیر جگمگاتا ہُوں

 

گورِ تِیرہ میں روشنی کے لئے

نعت کے دِیپ میں جلاتا ہُوں

 

بانٹتے ہیں وہ نعمتیں رب کی

صدقۂ مصطفیٰ میں کھاتا ہُوں

 

حُکم ہے نعمتوں کے چرچے کا

جشنِ میلاد یُوں مناتا ہُوں

 

یاد آتی ہے جب مدینے کی

دل میں کیف و سُرور پاتا ہُوں

 

کاش اِس قول کا بنوں مصداق

تِیر لگتے ہیں مُسکراتا ہُوں

 

اے غمو ! نہ ڈراؤ تم مجھ کو

اپنے غمخوار کو بُلاتا ہُوں

 

دل تو مرزا کبھی کا جا پہنچا

اب مدینے کو میں بھی جاتا ہُوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ