اردوئے معلیٰ

نعت اُتری درِ اِرم چوما

نعت اُتری درِ اِرم چوما

میم جب جب لکھا قلم چوما

 

ہوں گے نازاں لبانِ روحِ امیں

اور کس نے ترا قدم چوما؟

 

نقشِ نعلین جب بھی چوما ہے

یہ قلق ہی رہا ہے کم چوما

 

سُن کے اسمِ نبی انگوٹھوں کو

سارے عُشّاق نے بہم چوما

 

لمحہ لمحہ سبھی مناظر نے

گنبدِ سبز دم بہ دم چوما

 

سنگِ اسود تھا رشکِ ارض و سما

آپ نے جب شہِ اُمم چوما

 

بہرِ تسکیں ہر ایک مشکل میں

نامِ نامی بہ چشمِ نم چوما

 

سوزِ ہجر و فراق دور ہوا

جب سے سنگِ درِ کرم چوما

 

آنکھ منظر عجب سرور میں ہے

جب سے نظارۂ حرم چوما

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ