اردوئے معلیٰ

Search

نعت ایسی بھی کوئی مجھ پہ اتاری جائے

جس کی تاثیر سے تقدیر سنواری جائے

 

اے خیالِ شہِ کونین اگر تو نہ رہے

زندگی کس کے بھروسے پہ گزاری جائے

 

سنگریزوں کی سلامی کہیں عطر افشانی

جس طرف سے شہِ طیبہ کی سواری جائے

 

کب سے ملتی نہیں وہ خانۂ باطن میں مجھے

ایسی شئے ان کے قدم پر جو نثاری جائے

 

ایک دروازے کا دیتا ہے پتہ جاؤکَ

اس پتے پر لیے کشکول بھکاری جائے

 

حکمِ ربی ہے کہ پر اپنے بچھا دیں جبریل

پُل سے جب امتِ محبوب گزاری جائے

 

صبحِ پیغامِ مدینہ ہو نمودار ابھی

اور ہم سے نہ شبِ ہجر گزاری جائے

 

معنئ سجدۂ محشر ہے یہی اے فاضل

خلد میں امتِ شہ جائے تو ساری جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ