نعت سے دامنِ طلب بھر دے

نعت سے دامنِ طلب بھر دے

میرے مولا! مجھے غنی کر دے

 

سیم و زر میری آرزو ہی نہیں

عشقِ احمد میں دیدۂ تر دے

 

نامِ نامی برنگِ نو لکھوں

مجھ کو حسانؓ کا مقدر دے

 

اپنے محبوب کو خدائے کریم

باغِ جنت دے ، حوضِ کوثر دے

 

روزِ محشر نجات کا مژدہ

عاصیوں کو شفیعِ محشر دے

 

اُن کے روضے پہ اُڑ کے جا پہنچوں

کاش میرا خدا مجھے پر دے

 

رات جب زندگی پہ چھا جائے

روشنی تیرا روئے انور دے

 

کاش ایسا کوئی سُخن کہہ دوں

میرا محبوب مجھ کو چادر دے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ