اردوئے معلیٰ

نعت شایانِ نبی ہو نہیں اس کا امکاں

میں تو لکھتا ہوں کہ رہ جائے نہ دل میں ارماں

 

وہ ہے سرتاجِ رسولاں وہ ہے شاہِ خوباں

وہ ہے محبوبِ خداوند وہ شاہِ گیہاں

 

پاک دامان و خوش اندام ہے شاہِ خوباں

خوش دل و خوش نگہ و خوش سخن و خوش الحاں

 

زلفِ سنبل سے بھی خوش تر ہے وہ زلفِ پیچاں

صبحِ خنداں ہو نچھاور وہ ہے روئے تاباں

 

دل میں پیوست ہوں ایسے ہیں خدنگِ مژگاں

رشکِ یاقوت ہیں لب دُرِّ عدن ہیں دنداں

 

وہ ہے مستغنی ہر شان و شکوہِ شاہاں

ہے کوئی شیش محل اور نہ در پر درباں

 

وہ ہے ناراضگی رب سے ہمیشہ ترساں

وہ ہمہ وقت ہے خوشنودی رب کا خواہاں

 

اپنے اصحاب کی محفل میں ہو گوہر افشاں

رزم گاہِ حق و باطل میں وہ مردِ میداں

 

مشکلیں اتنی اٹھائی ہیں برائے امت

مرحبا ہو گئی ہر مشکلِ امت آساں

 

اپنی امت کے لئے اس کی پریشاں قلبی

اٹھ کے راتوں کو دعا جو بہ حضورِ یزداں

 

جس کی گردن میں پڑا طوقِ غلامی اس کا

وہ ہے آزاد زِ آلامِ بلائے دوراں

 

کوئی محروم نہیں جود و کرم سے اس کے

رحمتِ کون و مکاں ہے وہ عمیم الاحساں

 

چشمِ انساں پہ سب اوصافِ نبی کب روشن

دیکھ سکتا نہیں انساں بہ نگاہِ یزداں

 

روضۂ پاک کی ہم نے بھی زیارت کی ہے

بارِ دیگر بھی نظرؔ دل سے ہے عہد و پیماں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات