نعت میں کیسے کہوں اُن کی رضا سے پہلے​

نعت میں کیسے کہوں اُن کی رضا سے پہلے​

میرے ماتھے پہ پسینہ ہے ثنا سے پہلے​

 

​نور کا نام نہ تھا عالمِ امکاں میں کہیں​

جلوئہ صاحب لولاک لما سے پہلے​

 

​اُن کا در وہ درِ دولت ہے جہاں شام و سحر​

بھیک ملتی ہے فقیروں کو صدا سے پہلے​

 

​اب یہ عالم ہے کہ دامن کا سنبھلنا ہے محال​

کچھ بھی دامن میں نہ تھا ان کی عطا سے پہلے​

 

​تم نہیں جانتے شاید میرے آقا کا مزاج​

اُن کے قدموں سے لپٹ جاؤ سزا سے پہلے​

 

​چشم رحمت سے ملا اشک ندامت کا جواب​

مشکل آسان ہوئی قصد دعا سے پہلے​

 

​میری آنکھیں میرا رستہ جو نہ روکیں اقبال​

میں مدینے میں ملوں راہ نما سے پہلے​

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ