اردوئے معلیٰ

نعت کے میرے سینے میں در کُھل گئے

جیسے جکڑے ہُوئے دونوں پَر کُھل گئے

 

بس تصوّر کیا آپ موجود ہیں

نور کے سلسلے آنکھ پر کُھل گئے

 

بس اُدھر گھومی دل میں کلیدِ ثنا

ایک اک کرکے سب قفل اِدھر کُھل گئے

 

یامحمد کہا اور تہہ میں گیا

راز جتنے بھی تھے سر بہ سر کُھل گئے

 

تُو مدینے کی گلیوں سے ہو آئی ہے

تیرے تیور نسیمِ سحر کُھل گئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات