اردوئے معلیٰ

Search

نمو کے جوش میں ذوقِ فنا حجاب بنا

شریکِ بحر جو قطرہ ہوا حباب بنا

 

تو آپ اپنے ہی جلووں میں رہ گیا گھر کر

ترا ہی عکس ترے حسن کا جواب بنا

 

بچھڑ کے تجھ سے ترا سایہ جہاں افروز

سحر کو مہر بنا ، شب کا ماہتاب بنا

 

نہ مٹ سکے گا ترا نقش لوحِ فطرت سے

نہ بن سکے گا نہ اب تک ترا جواب بنا

 

سمٹ کے جُزوِ پریشاں بنے جہانِ حیات

ابھر کے جوشِ نمو عالمِ شباب بنا

 

تمہارے گرمیٔ محفل کے رنگ نے اُڑ کر

کہیں پناہ نہ پائی تو آفتاب بنا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ