اردوئے معلیٰ

نورِ وحدت کے امیں تجھ پہ درود اور سلام

سبز گنبد کے مکیں تجھ پہ درود اور سلام

 

شان بخشی تجھے اللہ نے سب سے بالا

مثل تیری نہ کہیں تجھ پہ درود اور سلام

 

اور کوئی ہو نہ سکا اتنا قریں خالق کے

جس قدر تو ہے قریں تجھ پہ درود اور سلام

 

بوریا اور چٹائی ترا بستر تھا شہا

تھی غذا نان جویں تجھ پہ درود اور سلام

 

ساری باتیں ہیں دو عالم کی ترقی کا سب

سرورا! تو نے جو کیں تجھ پہ درود اور سلام

 

عزتیں دونوں جہاں کی مرے آقا ساری

تیرے ماتھے پہ سجیں تجھ پہ درود اور سلام

 

نہ کوئی تیرا مماثل ہی ہوا ہے آقا

نہ کوئی تجھ سا حسیں تجھ پہ درود اور سلام

 

فیض وجود اور سخا کی سبھی نہریں جاری

تیرے ہی گھر سے ہوئیں تجھ پہ درود اور سلام

 

تیری آمد سے شہا خیر مسلسل آئی

ظلمتیں تجھ سے چھٹِیں تجھ پہ دروداور سلام

 

تیری توصیف کا صدقہ ہیں یہ آقا جتنی

عزتیں مجھ کو ملیں ‘ تجھ پہ درود اور سلام

 

چشم رحمت ہو گنہگار پہ یا شاہِ اُمم

قلبِ ازہرؔ ہے حزیں تجھ پہ درود اور سلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ