اردوئے معلیٰ

نور کے حرف چنوں، رنگ کا پیکر باندھوں

نور کے حرف چنوں، رنگ کا پیکر باندھوں

نعت لکھنی ہو تو مہر و مہ و اختر باندھوں

 

شاید اِس طرح کوئی نغمۂ دلکش اُبھرے

آنکھ کے موتی کو جبریل کے پَر، پر باندھوں

 

ایک منظر سے تو بنتا نہیں اُس کا منظر

نور کے سارے حوالوں کو مکرّر باندھوں

 

لب کا پیرایہ تو بے حد ہے ثقیل و جامد

مَیں ترا اسم کہیں بوسے کے اندر باندھوں

 

ویسے تو حجرۂ رحمت ہے تمثل سے وریٰ

بہرِ تفہیم اسے عرش کے اوپر باندھوں

 

نسبت و نام تو پہلے سے ہے حاصل مقصودؔ

تاجِ نعلین جو مِل جائے تو سَر پر باندھوں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ