اردوئے معلیٰ

Search

نَسَباً آپ ہیں اَنفَس، اے زَکِیّ و اَنفَس !

حَسَباً آپ ہیں اَقدَس، اے زَکِیّ و اَنفَس !

 

اصلِ مَسجودِ مَلَک ! تیری طرف ساجد ہیں

کعبہ و بیتِ مقدَّس ،اے زَکِیّ و اَنفَس !

 

عرصۂِ نَافیِٔ عِرفانِ اَقارب میں بھی

آپ ہی ہیں کسِ بے کس، اے زَکِیّ و اَنفَس !

 

مَطلعِ نورِ خدا ، حیدر و زَہرا ، حسنین

خوب ہے نَظمِ مُخَمَّس، اے زَکِیّ و اَنفَس !

 

تِرا ناِعت مِرا گفتہ ، مِری دھڑکن دھڑکن

تِری ذاکر مِری نَس نَس، اے زَکِیّ و اَنفَس

 

کعبہ و عرش سے وہ خاک بھی اَفضل ٹھہری

جو تِرے جسم سے ہے مَس، اے زَکِیّ و اَنفَس !

 

تیغِ لب جو نہ چلائے تِرے اَعدا کے خلاف

وہی شیطان ہے اَخرَس، اے زَکِیّ و اَنفَس

 

شہد ہو ، قند کہ مصری کہ ہو چینی سب میں

تیرے لہجے کا گُھلا رَس ،اے زَکِیّ و اَنفَس

 

ہیں سبھی لفظ تِرے گِرد بَہ اِحرامِ ثنا

ہوں مُعَرّب کہ مُفَرَّس ،اے زَکِیّ و اَنفَس

 

ہے ترا دستِ یَدُ اللّٰہ سرِ اہلِ طلب

ہے تِرا بس بسِ بے بس، اے زَکِیّ و اَنفَس

 

بھیج فاروق سا گلزار گرِ دشت کہ اب

ہاتھ بندر کے ہے ماچس ، اے زَکِیّ و اَنفَس

 

تیری نسبت سے معظمؔ ہے ترا رشکِ چمن

ورنہ اس سے ہیں بَھلے خَس، اے زکیّ و انفس

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ