نَو بہ نَو اظہار جُو ہے خَلق دانِ ہست و بُود

نَو بہ نَو اظہار جُو ہے خَلق دانِ ہست و بُود

رشتۂ لولاک قائم ہے میانِ ہست و بُود

 

تُو ہی تُو ہے صوتِ کُن لم یزل اظہار میں

غایتِ تکوین و تزئینِ جہانِ ہست و بُود

 

تیری خوشبو کا سفر ہے قبل و بعدِ ممکنات

تیری طلعت کے نشاں ہیں سب نشانِ ہست و بُود

 

نعت ہی کا مصرعِ اول ہیں غایاتِ نمو

نام ہی کا حرفِ آخر ہے بیانِ ہست و بُود

 

پہلے نورِ ذات سے بخشا تعارف ، اور پھر

کنزِ مخفی نے اُچھالی داستانِ ہست و بُود

 

بن گئی منزل نشاں ، پائے کرم پروَر کی دُھول

ورنہ محتاجِ ہدف رہتی کمانِ ہست و بُود

 

تُو رگِ جاں میں رواں ہے صورتِ امکانِ جاں

وجہِ تَخلیقِ دو عالَم ! تُو ہے جانِ ہست و بُود

 

تیرے آنے سے چلے رنگ و شرَف کے قافلے

اے بہارِ باغِ ہستی ، عزو شانِ ہست و بُود

 

معتبر تقویٰ ہُوا ، نا معتبر نام و نسَب

تیری نسبت پا گیا جب خاندانِ ہست و بُود

 

جب بساطِ زندگی آراستہ کر دی گئی

تُو ہُوا مسند نشینِ آستانِ ہست و بُود

 

آپ ہیں مقصودؔ و مطلوب تمنائے دروں

آپ ہیں روح و روانِ کاروانِ ہست و بُود

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ