اردوئے معلیٰ

Search

نگاہِ لطفِ رب میری طرف ہے

نبی کی نعت سے مجھ کو شغف ہے

 

زمیں ہو یا فلک یا عرش و کرسی

ضیائے ماہِ بطحا ہر طرف ہے

 

رسائے عرشِ اعظم ہے وہی اک

اسی محبوبِ حق کا یہ شرف ہے

 

نہ ہو جس دل میں حبِ شاہِ بطحا

گلِ بے نم ہے پتھر ہے خذف ہے

 

ہے دنیا تنگ اب مسلم پہ شاہا

ستم ہائے زمانہ کا ہدف ہے

 

متاعِ گوہرِ ایماں ہے غائب

اب اس کا دل بلا گوہر صدف ہے

 

نہیں ذوقِ عبادت اس کے دل میں

مذاقِ لہو و رقص و چنگ و دف ہے

 

ہوا محروم خود حسنِ عمل سے

وہ بس اب داستاں گوئے سلف ہے

 

بجوفِ طاقِ نسیاں رکھ دیا ہے

نہیں قرآں سے تیرے اب شغف ہے

 

نہیں کچھ اکتسابِ فیض اس سے

اگر کچھ ہے تو بس کارِ حلف ہے

 

مسافر ہے مگر بے سمتِ منزل

رواں مثلِ خدنگِ بے ہدف ہے

 

ہے افسانہ مسلماں کی فتوت

جو تھا خنجر بکف ساغر بکف ہے

 

نظرؔ اعجاز یہ ذکرِ نبی کا

غم و اندوہِ دل سب برطرف ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ