اردوئے معلیٰ

نہیں قیدِ رنج وغم سے کوئی صورتِ رہائی

اے غیاث مستغیثاں ترے نام کی دُہائی

 

ہے ظہورِ پاک تیرا ہمہ شانِ کبریائی

تو زفہمِ من بلندی تو زفکرِ من ورائی

 

بہ مقامِ مصطفائی بہ مقامِ مجتبائی

بہ خیالِ من نہ گنجی بہ گمانِ من نہ آئی

 

وہ سکندری سے بہتر وہ تونگری سے بہتر

ترے در سے جو ملی ہے مجھے لذتِ گدائی

 

کبھی باریاب ہوگا کبھی باوقار ہوگی

یہ مرا دریدہ دامن ، یہ مری شکستہ پائی

 

اُسی بارگاہ میں ہے مرا عشق نغمہ پیرا

جہاں عقلِ خود نما کو نہیں اذنِ لب کُشائی

 

تری عظمتوں کے قرباں، ترے در سے مانگتا ہوں

دلِ سعدی و نظامی ، دلِ رومی و سنائی

 

مگر از نگاہِ خواجہ شدی فیض یاب مظہر

ہمہ ذوق و شوق و مستی ہمہ سوزِ آشنائی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات