اردوئے معلیٰ

Search

نہیں ہے کام اب مجھ کو کسی سے

میں وابستہ ہوں دامانِ نبی سے

 

وہ میرے ہیں میں دیوانہ ہوں اُن کا

یہ کہتا پھر رہا ہوں میں سبھی سے

 

مری نسبت ہی سرمایہ ہے میرا

یہی پایا ہے میں نے زندگی سے

 

مئے عشقِ نبی سے مست یوں ہوں

نہ نکلوں عمر بھر اس بے خودی سے

 

وہی کردینگے کشتی پار میری

بندھی اُمید ہے میری اُنہی سے

 

نویدِ موت طیبہ میں جو آئے

تو مر جاؤں مسرّت سے خوشی سے

 

جو اُن کے ہو گئے عارفؔ وہ گویا

فرشتے ہو گئے ہیں آدمی سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ