اردوئے معلیٰ

Search

نہ آفتاب نہ روشن قمر کی حاجت ہے

ہمیں تو نورِ شہِ بحر و بر کی حاجت ہے

 

نشانِ منزلِ حق سے بھٹکنے والوں کو

نصابِ حضرتِ خیر البشر کی حاجت ہے

 

جہانِ حسرت و بے چارگی کا مارا ہے

دلِ حزیں کو کسی باخبر کی حاجت ہے

 

جہاں صدا سے بھی پہلے عطا کی بارش ہو

گدا گروں کو اُسی ایک در کی حاجت ہے

 

تمہارا ورد پکاؤں زباں کی چاہت ہے

تمہارے نام پہ کٹ جاؤں سر کی حاجت ہے

 

یہ آ تو جاتا ہے قلب و نظر میں ، ہاں لیکن

میں تیرا نام نہ لے لوں یہ ڈر کی حاجت ہے

 

تبسم اور ملے کچھ یا نہ ملے لیکن

تبسمِ شہِ جن و بشر کی حاجت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ