نہ جوازِ گنبدِ سبز میں ، نہ دیارِ گنبدِ سبز میں

نہ جوازِ گنبدِ سبز میں ، نہ دیارِ گنبدِ سبز میں

مری ہجر زاد مسافتیں ہیں مدارِ گنبدِ سبز میں

 

وہی تازگی کی نمود ہے ، وہی زندگی کا شہود ہے

وہ جو سبزگی سی رواں رواں ہے بہارِ گنبدِ سبز میں

 

کوئی ہست اُس سے جُدا نہیں ، کوئی بُود اُس سے ورا نہیں

کہ یہ ممکنات کے سلسلے ہیں حصارِ گنبدِ سبز میں

 

کوئی شوق وقفِ نظر سہی ، کوئی جذب گردِ سفر سہی

جو کُشادِ بابِ مُراد ہے تو جوارِ گنبدِ سبز میں

 

کسی دستِ خُوئے کریم نے ، اُسے اپنے لمس میں لے لیا

جو دعائے رفتہ پڑی ہُوئی تھی کنارِ گنبدِ سبز میں

 

مَیں نہیں گزیدۂ شامِ غم ، مَیں نہیں گرفتۂ کربِ جاں میں

کہ مدارِ بہجتِ طالعی ہے منارِ گنبدِ سبز میں

 

مری بے شمار ضرورتوں سے بھی ہیں فزوں تری رحمتیں

مری ایک بھی تو خطا نہیں ہے شمارِ گنبدِ سبز میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ