نہ دیکھوں گا حسینوں کو ارے توبہ نہ دیکھوں گا

نہ دیکھوں گا حسینوں کو ارے توبہ نہ دیکھوں گا

تقاضا لاکھ تو کر اے دل شیدا نہ دیکھوں گا

 

کروں ناصح میں کیونکر ہائے یہ وعدہ نہ دیکھوں گا

نظر پڑ جائے گی خود ہی جو دانستہ نہ دیکھوں گا

 

نگاہ ناز کو تیری میں شرمندہ نہ دیکھوں گا

ہٹائے لیتا ہوں اپنی نظر اچھا نہ دیکھوں گا

 

وہ کہتے ہیں نہ سمجھوں گا تجھے مجذوبؔ میں عاشق

کہ جب تک کوچہ و بازار میں رسوا نہ دیکھوں گا

 

بلا سے میں اگر رو رو کے بینائی بھی کھو بیٹھوں

کروں گا کیا ان آنکھوں کو جو وہ جلوہ نہ دیکھوں گا

 

بلا سے میرے دل پر میری جاں کچھ ہی گزر جائے

میں تیری خاطر نازک کو آزردہ نہ دیکھوں گا

 

اٹھاؤں گا نہ زانو سے میں ہرگز اپنا سر ہمدم

ارے میں اپنی آنکھوں سے انہیں جاتا نہ دیکھوں گا

 

حسینوں سے وہی پھر حضرت دل دیدہ بازی ہے

ابھی تو کر رہے تھے آپ یہ دعویٰ نہ دیکھوں گا

 

ذرا اے ناصح فرزانہ چل کر سن تو دو باتیں

نہ ہوگا پھر بھی تو مجذوبؔ کا دیوانہ دیکھوں گا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ