اردوئے معلیٰ

نہ ٹھہری جب کوئی تسکین دل کی شکل یاروں میں

تو آ نکلے تڑپ کر ہم تمہارے بے قراروں میں

 

کسی کے عشق میں درد جگر سے دل یہ کہتا ہے

ادھر بھی آ نکلنا ہم بھی ہیں امیدواروں میں

 

وہ ماتم بزم شادی ہے تمہاری جس میں شرکت ہو

وہ مرنا زندگی ہے تم جہاں ہو سوگواروں میں

 

تعلی سے یہ نفرت ہے کہ بعد مرگ خاک اپنی

اگر اٹھتی بھی ہے جا بیٹھتی ہے خاکساروں میں

 

ہمارے دل نے ہم سے بے وفائی کر کے کیا پایا

وہاں بھی جا کے ٹھہرایا گیا بے اعتباروں میں

 

وہ کھینچوں گا جلالؔ آہیں کہ اس کی خاک اڑا دیں گی

فلک نے پیس ڈالا ہے سمجھ کر خاکساروں میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات