اردوئے معلیٰ

Search

نہ پل صراط نہ محشر کے دن سے ڈرتا ہے

جو روز اپنے نبی پہ درود پڑھتا ہے

 

مہک سے جاتے ہیں اطراف مشک و عنبر سے

تمہارا نام خیالوں سے جب گزرتا ہے

 

درود پڑھنے کا رب یہ ثواب دیتا ہے

کہ سیئات کو حسنات سے بدلتا ہے

 

ہم اپنے رب کو بھی تجھ میں تلاش کرتے ہیں

ہمیں یقیں ہے خدا بھی یہیں سے ملتا ہے

 

جمالِ یار کی تابانیاں تو ایک طرف

خیالِ یار ہی مشکل کو ٹال دیتا ہے

 

خدا کرے کہ پہنچ جائے خیر سے آنسو

یہ گھر سے شہرِ نبی کیلئے نکلتا ہے

 

خیالِ گنبدِ خضرٰی کی رھنمائی سے

جہانِ حزن و الم کا مکیں سنبھلتا ہے

 

تبسمِ شہِ محشر خیال میں رکھ کر

تبسم اپنے تصور کو پاک رکھتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ