اردوئے معلیٰ

نہ پُھول کی نہ کسی نافۂ غزال کی ہے

نہ پُھول کی نہ کسی نافۂ غزال کی ہے

سُخن کے دشت میں خوشبو ترے خیال کی ہے

 

زمیں سے تا بہ فلک روشنی کمال کی ہے

فضا میں آج شباہت ترے جمال کی ہے

 

نہ دیکھ بالکنی سے غُروب کا منظر

جمالِ یار ! سنبھل ، یہ گھڑی زوال کی ہے

 

ترا نہ ہونا بھی اب تو ہے تیرے ہونے سا

فراق میں بھی مری کیفیت وصال کی ہے

 

میں تجھ کو دیکھ کے ہنستا ہوں اور سوچتا ہوں

پرائی چیز سہی ، چیز تُو کمال کی ہے

 

نگاہِ یار بھلے بے نیاز ہو فارس

نگاہِ یار ہی محرم تمہارے حال کی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ