اردوئے معلیٰ

نیا سلسلہ آئے دن امتحاں کا

ہے دستورِ پارینہ بزمِ جہاں کا

 

کرے سامنا پھر اس ابرو کماں کا

یہ دیدہ تو دیکھیں دلِ نیم جاں کا

 

کبھی تو وہ ہو گا جفاؤں سے تائب

ہے اک واہمہ میرے حسنِ گماں کا

 

سرشکِ مژہ سے کب اندازۂ غم

کسے حال معلوم سوزِ نہاں کا

 

زمیں دوز ہو کر رہی برقِ سوزاں

پڑا صبر آخر مرے گلستاں کا

 

نہ مہکے ہیں گل ہی نہ چہکے عنادل

گماں ہے بہاروں پہ دورِ خزاں کا

 

سنا غم کے ماروں کا قصہ کبھی جب

لگا مجھ کو ٹکڑا مری داستاں کا

 

جو خود کٹ گیا رہبرِ کارواں سے

خدا ہی محافظ ہے اس کارواں کا

 

نہ پورا ہو ہرگز نظرؔ زندگی بھر

خسارہ کہ ہے لحظۂ رائیگاں کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات