واجبِ تعظیم و عزت ، لائقِ صد احترام

واجبِ تعظیم و عزت ، لائقِ صد احترام

اَلسَّلام اے اُمّہات المومنیں اعلیٰ مقام

 

ہو کرم کی اک نظر اے اُمّہات المومنیں

میں غلام ابنِ غلام ابنِ غلام ابنِ غلام

 

سورہِ احزاب میں فرما رہا ہے خود خدا

مومنوں کی ماں ہے ہر اک زوجہِ خیرُ الانام

 

ق

 

ہوں خدیجہ ، حفصہ ، زینب ، اُمِّ سلمہ ، ماریہ

بنتِ حارث ، عائشہ ، یا زینبِ ذی احترام

 

سودہ و اُمّؐ حبیبہ ، صفیہ و میمونہ ہوں

اُمّہات المومنیں ہیں سب کی سب عالی مقام

 

ق

 

بعدِ "​ تطہیراً "​ کلامِ پاک میں "​ وَاذکُرنَ "​ ہے

یعنی اہلِ بیت میں ازواج ہیں شامل تمام

 

ہر کسے آمد نہ شُد ایں جا برائے منقبت

مدح خوانِ اُمّہات المومنیں ! تم پر سلام

 

اُمّہات المومنیں کا خاص مجھ پر ہے کرم

ورنہ ممکن ہی کہاں تھا لکھتا میں ایسا کلام

 

آں کہ دریائے کرم است ، ایں کہ دانش بے نوا

یک نظر اے اُمّہاتُ المومنیں بر ایں غلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سکھاتی ہے یہ کربلا ، حسین زندہ آج بھی
اے حبِّ وطن ساتھ نہ یوں سوئے نجف جا
غمِ حسینؑ میں جو آنکھ تر نہیں ہوتی
اصحابؓ النبی
خاص ہے مجھ کو تعلق شبر و شبیر سے
خاک ہم ہیں،کوہِ فاراں ہیں علیِ مرتضی
کچھ بھی نہیں تھا سیّدِ ابرار سے پہلے
عقل میں کہاں طاقت علم میں کہاں وسعت
وہ دوجہاں میں ہے واللہ سرفرازِ علی
شکر خالق کس طرح سے ہو اَدا