اردوئے معلیٰ

واحد ہے تو تنہا ہے، تو ذات میں یکتا ہے

واحد ہے تو تنہا ہے، تو ذات میں یکتا ہے

ہم دور سمجھتے ہیں تو پاس ہی رہتا ہے

 

تو شرک سے بالا ہے اعلیٰ سے اعلیٰ ہے

ہر جان کو تو اپنے قبضے میں ہی رکھتا ہے

 

ہمسر نہ کوئی تیرا، ثانی نہ کوئی تیرا

میں خبر جو پاتا ہوں، توفیق تو دیتا ہے

 

موسم یہ سبھی تیری قدرت کی گواہی ہیں

تو راز تو ہے لیکن ہر رنگ میں کھلتا ہے

 

مشغول عبادت ہوں، مصروف اطاعت ہوں

موجود ہے ہر جا تو، باخبر تو رہتا ہے

 

مشہود کے پردے میں، موجود تجھے دیکھا

کرتا ہے ثناء تیری جو ہونٹ بھی ہلتا ہے

 

خالق ہے تو مالک ہے، داتا ہے تو مولا ہے

دامن کو مرے ہر پل رحمت سے تو بھرتا ہے

 

کرتا ہوں ثنا تیری شاہوں میں رضا تیری

محتاج ہیں سب تیرے تو سب کا ہی داتا ہے

 

اس خاک کے پتلے کو کیا شان عطا کردی

ہر رنگ تیرا مولا اس پر ہی تو کھلتا ہے

 

ہر چشم تماشائی، توصیف کرے تیری

ممتاز تو کرتا ہے، مردود تو کرتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ