واہ شاہِ دوسرا رتبہ شبِ اسری ترا

 

واہ شاہِ دوسرا رتبہ شبِ اسری ترا

رفعتِ افلاک نے سر پر لیا تلوا ترا

 

ڈوب جائیں گے مہ و انجم سبھی وقتِ سحر

صبحِ صادق کی طرح ہوگا عیاں جلوہ ترا

 

دھڑکنوں کی دف پہ دل ہے محوِ نعت و التجا

پڑھ رہا ہے نعت تیری یا نبی بندہ ترا

 

اے امام الانبیا، اے نائبِ پروردگار

آج بھی تکتی ہے رستہ مسجدِ اقصی ترا

 

جلوہ گر تھے دوشِ الفت پر شہیدوں کے امام

اے شہِ دیں اس لئے لمبا ہوا سجدہ ترا

 

جاں گُسِل روزِ جزا ہے المدد اے مہرباں

سب کھڑے ہیں منتظر اٹھ جائے اب پردہ ترا

 

تیری ہی آمد پہ ہے موقوف سارا سلسلہ

حشر میں سب یک زباں ہوکر پڑھیں نغمہ ترا

 

بہر سجدہ چاہیے منظرؔ سے دیوانے کو بھی

سنگِ در اے جانِ جاں اے سیدِ ذی جہ ترا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ