اردوئے معلیٰ

وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود

وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود

بہت کریم، بڑا مہرباں ہے نخلِ درود

 

حلاوتوں کا وہ اِک سایہ دار خوابِ حلو

لطافتوں کا حسیں گُلستاں ہے نخلِ درود

 

کشاں کشاں اُسی جانب رواں ہیں نعت بہ لب

طیورِ شوق کی جائے اماں ہے نخلِ درود

 

عجیب اخضر و احمر ہیں اس کے برگ و ثمر

ربیعِ تازہ میں گنبد نشاں ہے نخلِ درود

 

جَڑے سطور میں تارے، کھِلے حروف میں رنگ

زمیں پہ جیسے کوئی آسماں ہے نخلِ درود

 

اسی لیے تو ضروری ہے قبل و بعدِ دُعا

حروفِ عجز کا خود پُشت باں ہے نخلِ درود

 

جلو میں اس کے طراوت سی ہے بصد انداز

اُداس رُت میں بھی تسکینِ جاں ہے نخلِ درود

 

رہا ہے زیست کا جب سانس سانس ورد یہی

تو قبر میں بھی مرا ترجماں ہے نخلِ درود

 

رواں ہے آنکھ سے دل کی زمیں پہ آبِ طلب

کھِلا ہُوا جو کہیں درمیاں ہے نخلِ درود

 

دہن میں کھِلتی ہے نُطق و سخن کی نکہتِ نو

خیالِ شوق کا جو ارمغاں ہے نخلِ درود

 

وہ ایک سایۂ رحمت شعار ہے مقصودؔ

علاجِ تلخیٔ کربِ نہاں ہے نخلِ درود

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ