وصف سرکار کے بیاں کیجئے

وصف سرکار کے بیاں کیجئے

اپنی تحریر جاوداں کیجئے

 

مشعلیں جھلملائیں آنکھوں کی

مدحتِ شاہِ مرسلاں کیجئے

 

بھیج کر ان پہ بار بار درود

اپنے سینے کو ضوفشاں کیجئے

 

جب بھی مرجھائیں پھول ہونٹوں کے

​نام نامی کو حرزِ جاں کیجئے

 

انکے صدقے میں کیا نہیں ملتا

ڈھنگ سے مدعا بیاں کیجئے

 

ان کی رحمت وہاں وہاں ہوگی

یاد ان کو جہاں جہاں کیجئے

 

ڈوب کر آسؔ ان کی الفت میں

ذہن کو بحر بیکراں کیجئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سرعرش انھیں جلوہ گر دیکھتے ہیں
دلوں کے گلشن مہک رہے ہیں یہ کیف کیوں آج آ رہے ہیں
رہِ شریعت پر آ رہے ہیں قدم اپنا بڑھا رہے ہیں
سر بہ سر مصحفِ انوار کوئی اور نہیں
نبی کا نام جب میرے لبوں پر رقص کرتا ہے
جب حسن تھا ان کا جلوہ نما انوار کا عالم کیا ہوگا
ہے نرالے جوش پر کچھ آج فیضانِ رسول
حَبس بڑھنے لگا ' سانس گُھٹنے لگی ' یا نبیؐ ' یا نبیؐ
عطاۓ ربّ ہے جمال طیبہ
آپ کا نامِ نامی ہے وردِ زباں ہے مِرے دل میں ہے بس آرزو آپ کی