وقفِ نعتِ شہِ مرسلاں کیجیے

وقفِ نعتِ شہِ مرسلاں کیجیے

زیست کو اپنی یوں کامراں کیجیے

 

یاد ان کی محافظ ہے اپنی تو پھر

کس لیے خوفِ تیغ و سناں کیجیے

 

سوئے طیبہ چلے جب کوئی کارواں

خود کو گردِ رہِ کارواں کیجیے

 

لیجیے اور کچھ مت دوا کے لیے

ذکر کو ان کے آرامِ جاں کیجیے

 

چاہیے جو رضا ربِ کونین کی

"مدحتِ شاہِ کون و مکاں کیجیے”

 

کیجیے تذکرہ گنبدِ سبز کا

دور لمحوں میں دورِ خزاں کیجیے

 

نعتِ سرکار میں ڈھال کر اے مجیبؔ

اور افکار اپنے جواں کیجیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ