اردوئے معلیٰ

Search

وہی راستہ رشکِ باغِ جِناں ہے

وہی جس کی منزل ترا آستاں ہے

 

زمانے کا راندہ ہوا دل ہمارا

یہی پوچھتا ہے مدینہ کہاں ہے

 

اُنہیں اُن کی نعتیں سنانے کا جذبہ

لہو کی طرح میرے اندر رواں ہے

 

حضور آئیں ، آ جائیں ، اب آ بھی جائیں

مری دھڑکنیں بھی وظیفہ کناں ہیں

 

تمہی بے زبانوں کے مشکل کشا ہو

ترے ہجر کا درد بھی بے زباں ہے

 

ہے زر کی ہوس کیوں ترے مدحَ خواں کو

یہ جذبہ تو بالائے سود و زِیاں ہے

 

تمہارے تبسم کی جب سے ضیاء لی

گلستاں اُسی دن سے عنبر فشاں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ