وہی محبوب، محبوبِ خُداؐ ہے

وہی محبوب، محبوبِ خُداؐ ہے

وہی محبوب میرا، آپ کا ہے

 

وہی ہے تاجدارِ تاجداراں

وہی دُکھیوں کا محکم آسرا ہے

 

وہی ہے کار سازِ درد منداں

مریضوں کو وہی دیتا شفا ہے

 

وہی چارہ گرِ بے چارگاں ہے

وہی حاجت روا، مشکل کشا ہے

 

جو ہے سایہ کناں ننگے سروں پر

وہ اُنؐ کے لُطف و رحمت کی رِدا ہے

 

سبھی دارین اُنؐ سے خیر پاتے

فنا کا دار یا دارالبقا ہے

 

ظفرؔ حمدِ خُدا نعتِ نبیؐ کا

ہے مضموں ایک، پیرایہ جدا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

چاند تاروں سے سرِ افلاک آرائش ہوئی
سجا ہے لالہ زار آج نعت کا
اِک بار اُٹھے تھے جو قدم نورِ ہدیٰ کے
کچھ نہیں مانگتا شاہوں سے یہ شیدا تیرا
ملی ہے محبت حضورؐ آپؐ کی
جس نے سمجھا عشق محبوب خدا کیا چیز ہے
درِ مصطفیٰؐ کا گدا ہوں میں، درِ مصطفیٰؐ پہ صدا کروں
لبوں پہ جس کے محمد کا نام رہتا ہے
مدحتِ شاہ سے آغاز ہوا بسم اللہ
مصروفِ حمدِ باری و مدحِ حضورؐ تھا​