اردوئے معلیٰ

وہی محبوب، محبوبِ خُدا ہے

وہی محبوب، محبوبِ خُدا ہے

وہی محبوب میرا، آپ کا ہے

 

وہی ہے تاجدارِ تاجداراں

وہی دُکھیوں کا محکم آسرا ہے

 

وہی ہے کار سازِ درد منداں

مریضوں کو وہی دیتا شفا ہے

 

وہی چارہ گرِ بے چارگاں ہے

وہی حاجت روا، مشکل کشا ہے

 

جو ہے سایہ کناں ننگے سروں پر

وہ اُن کے لُطف و رحمت کی رِدا ہے

 

سبھی دارین اُن سے خیر پاتے

فنا کا دار یا دارالبقا ہے

 

ظفرؔ حمدِ خُدا نعتِ نبی کا

ہے مضموں ایک، پیرایہ جدا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ