اردوئے معلیٰ

Search

وہی مومن جسے تو سب سے فزوں ہے یوں ہے

وہی عاقل ہے جسے تیرا جنوں ہے یوں ہے

 

قحط میں ذکر تِرا ابرِ کرم شاہِ اُمَم !

حَبس میں یاد تِری بادِ سکوں ہے یوں ہے

 

ساقیِٔ کوثر و تسنیم ! کوئی قطرۂِ وَصل !

دل جلانے کو مِرا سوزِ دروں ہے یوں ہے

 

والد و والدہ ، اولاد و جہانِ زر و سیم

مجھ کو ہر شے سے تِرا نام فزوں ہے یوں ہے

 

ہے حقیقت میں شہا ! تیری حقیقت کا وجود

اور باقی تو فسانہ ہے فسوں ہے یوں ہے

 

اِک تِری شان کا چرچا ہے سرِ بزمِ نُشور

اِک ترا نام پسِ کُن فیکوں ہے یوں ہے

 

نَفَسِ قلب پہ موقوف ہے جسموں کی حیات

رگِ عالم میں رواں آپ سے خوں ہے یوں یے

 

منزلِ اوجِ ترقّی ہے ترا نقش قدم

تیری سیرت کے سوا حال زبوں ہے یوں ہے

 

تیرے اِک وصف کی تشریح کو صدیاں بھی ہیں کم

کوئی کب تک کہے رتبہ تِرا یوں ہے یوں ہے

 

نَجم اور ناؤ کی الفت ہے مُعَظّمؔ لازم

سَقَفِ دین کا ہر ایک سُتوں ہے یوں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ