اردوئے معلیٰ

Search

وہ اپنے رب کو ہے سب سے پیارا

ہے سارے نبیوں کا بھی دُلارا

اُسی کو بخشی ہے دید رب نے

اُسی کے شایاں تھا وہ نظارا

اُسی کی آنکھوں میں حسنِ عالم

اُسی کے قدموں میں سروری ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

وہ نورِ قرآن بن کے آیا

عظیم احسان بن کے آیا

کلامِ ربی اُسی پہ اُترا

وہ رب کی پہچان بن کے آیا

وہ بزمِ جنت یہ بزمِ دُنیا

اُسی نبی کے لیے سجی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

وہ رب کی طاقت کی اِک نشانی

ہے کون خلقت میں اُس کا ثانی

وہ ہو مقابل تو کفر لرزاں

وہ رسمِ ہمت کا آپ بانی

اُسی سے ایمان میں حرارت

وہی تو مقصودِ زندگی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

جہاں میں ہرسُو بہار تُجھ سے

ہے بے کسوں کا وقار تُجھ سے

جو دشمنِ جان بن کے آئے

ملا ہے ان کو بھی پیار تجھ سے

تری چٹائی کی عظمتوں پر

ازل سے قرباں سکندری ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

ہر اِک صحیفے کا مان تم ہو

ہر ایک خطبے کی جان تم ہو

تمہاری سیرت بتا رہی ہے

کلامِ ربی کی جان تم ہو

حبیبِ رب نے جو کہہ دیا ہے

اُسی میں انساں کی بہتری ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

غرورِ انساں مٹانے آیا

گرے ہوؤں کو اُٹھانے آیا

وہ درسِ اخلاق دے کے سب کو

ہر اُجڑی بستی بسانے آیا

اُسی کے نعلین کی چمک سے

شعورِ انساں میں روشنی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

وہی ہے ٹوٹے دلوں کا چارا

ہر ایک مشکل میں وہ سہارا

ملی ہے شانِ عظیم اُس کو

شفاعتوں پہ وہ مسند آرا

وہ بخشوائے گا رب کو کہہ کے

یہ اُمتی ہے یہ اُمتی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

وہ سورج اُلٹا پھرا رہے ہیں

درخت کو بھی چلا رہے ہیں

کریں اشارہ تو کنکروں سے

وہ اپنا کلمہ پڑھا رہے ہیں

دو لخت ہے چاند بھی فلک کا

اگر وہ انگشت اُٹھ گئی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

گر اُن کی دہلیز سے گزرنا

نگاہ نیچی ہمیشہ ڈرنا

خُدا نے آداب ہیں بتائے

نہ اپنی آواز اونچی کرنا

جو جھک کے ملتے ہیں دوسروں سے

ہر اِک نبی اُن کا مقتدی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

وہ سب پہ رحمت لُٹا رہے ہیں

وہ دامنِ دِل بچھا رہے ہیں

ہیں لاکھ غافل ہم اُنکے در سے

مگر وہ پھر بھی نبھا رہے ہیں

کرم کے انداز ہیں نرالے

یہاں جفا ہے نہ بے رُخی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

پناہِ انساں حرم تمہارا

نہیں ہے کس پر کرم تمہارا

اے ماؤں بہنوں زرا بتاؤ

ہے کس نے رکھا بھرم تمہارا

یہ عزتیں سب اُنہی کا صدقہ

اُنہی کے باعث سلامتی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

ہرایک عزت کا تاج اُس کا

عطا و بخشش مزاج اُس کا

یہ دیکھ کر چیخ اُٹھے ہیں دشمن

دلوں کی دھڑکن پہ راج اُس کا

شکیلؔ اُس کا ہے ہر زمانہ

وہی حکمرانِ ہر صدی ہے

جہاں میں ہر سو نبی نبی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ