اردوئے معلیٰ

وہ بھی اب یاد کریں کس کو منانے نکلے؟

وہ بھی اب یاد کریں کس کو منانے نکلے؟

ہم بھی یونہی تو نہ مانے تھے ، سیانے نکلے

 

میں نے محسوس کیا جب بھی کہ گھر سے نکلا

اور بھی لوگ کئی کر کے بہانے نکلے

 

آج کی بات پہ میں ہنستا رہا ہنستا رہا

چوٹ تازہ جو لگی درد پرانے نکلے

 

ایک شطرنج نما زندگی کے خانوں میں

ایسے ہم شاہ جو پیادوں کے نشانے نکلے

 

تو نے جس شخص کو مارا تھا سمجھ کر کافر

اس کی مٹھی سے تو تسبیح کے دانے نکلے

 

کاش ہو آج کچھ ایسا وہ مرا مالک دل

میرے دل سے ہی میرے دل کو چرانے نکلے

 

آپ کا درد ان آنکھوں سے چھلکتا کیسے؟

میرے آنسو تو پیازوں کے بہانے نکلے

 

میں سمجھتا تھا تجھے ایک زمانے کا مگر

تیرے اندر تو کئی اور زمانے نکلے

 

لاپتہ آج تلک قافلے سارے ہیں امیرؔ

جو تیرے پیار میں کھو کر تجھے پانے نکلے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ