اردوئے معلیٰ

وہ بے نشان کا طلعت نشاں سراجِ منیر

وہ بے نشان کا طلعت نشاں سراجِ منیر

جہاں ہے صبحِ حقیقت وہاں سراجِ منیر

 

ہمہ زمان و مکاں میں ہے اُس کی جلوہ گری

چمک رہا ہے پسِ لا مکاں سراجِ منیر

 

رگِ حیات میں اُس کی طلب مثالِ رمق

کفِ نمود پہ خطِ رواں سراجِ منیر

 

سحر کے دامنِ ہستی پہ شوخ کرنوں کی رَو

وہیں چمکتا ہوا درمیاں سراجِ منیر

 

ہر اِک زمانہ ہُوا اُس کے دَر سے رخشندہ

نمودِ حال و دمِ رفتگاں سراجِ منیر

 

ستارے تھے جو چمکتے رہے بہ اوجِ فلک

مگر ہے نازشِ صد آسماں سراجِ منیر

 

یہ میرے خواب، یہ خواہش، یہ بامِ شامِ عطا

کہاں کہاں پہ نہیں ضوفشاں سراجِ منیر

 

وجودِ خَلق ہے شہرِ ہزار رنگ، مگر

میانِ شہر ہے تصویرِ جاں سراجِ منیر

 

شبِ سیاہ میں ملتی ہے مدحِ نُور کی خیر

فروغِ تابشِ حرف و بیاں سراجِ منیر

 

دیارِ نُور میں کیسا سکون ہے مقصودؔ

کرن کرن ہے مجسّم اَماں سراجِ منیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ